112

شکاری

سیاست کے بڑے ایوانوں میں کیا ہوتا ہے اور ٹھنڈے ڈرائنگ روموںمیںہونے والے سیاسی فیصلے کتنے دیر پا ہوتے ہیں یہ کوئی ملین ڈالر سوال نہیں کہ جس کا جواب نہ مل سکے۔ سب جانتے ہیں کہ آج کل کی پاکستانی سیاست ماضی کے برعکس کھیتوں کھلیانوں ، چوپالوں، میدانوں، تعلیمی اداروں، گلی محلوں، بازاروں، چوکوں، چوراہوںسے نکل کر جاگیردار ، سرمایہ دار، صنعت کار کے گھر کی لونڈی بن چکی ہے۔ جن غریبوں کے نام پر سیاست کا یہ کھیل کھیلا جاتا ہے یا جن کا نام لے لے کر سیاست دان باولے ہوئے جاتے ہیں ان کا تو کوئی پرسان حال ہی نہیں۔ کورٹ کچہری کے فیصلے اپنی جگہ، مقتدر حلقوں کی فکر مندی سے انکار نہیں۔ کون کیوں کس لئے نااہل قرار پایا یہ ہمارا سوال نہیں۔ آج کا سوال آئندہ پاکستانیوں کے دلوں پر کون راج کرے گا ؟ مستقبل میں نظام حکومت کیسا ہوگا؟ اور کیا اس بار عوام کے ووٹ کی حقیقی معنوں میں قدر ہوگی یا پھر ڈبے سے عوامی فیصلے کی بجائے صرف ”پرچی “ ہی نکلے گی۔ موجودہ سیاست دانوں کی دستیاب لاٹ میں سے کون کس سے بہتر ہے یہ بحث گھر گھر جاری ہے۔ اعلیٰ عدالتوں میں جاری اہم ترین مقدمات کی سماعت اور شریف خاندان کی نیب میں پیشیوں، ممکنہ فیصلوں سے بالاتر عوام 2018 ءکے انتخابات کے منتظر ہیں۔ جب انہیں اپنے ضمیر اور شعور کے مطابق فیصلہ کرنے کا موقع ملے گا کہ ان کا آئندہ حکمران کون ہو؟ شخصیات کی بنیاد پر بظاہربراہ راست دنگل تو خادم اعلیٰ پنجاب میاں محمد شہباز شریف، خیبر پختوا میں تبدیلی اور نیا پاکستان بنانے کے دعویدار عمران خان ، سندھ کے سیاسی مالکی سب پر بھاری آصف زرداری کے درمیان نظر آتا ہے جبکہ انتخابی دنگل میں حیران کن طورپر پانچ سال اقتدار کے مزے لوٹنے والے گٹھ جوڑ کے بادشاہ ہر نئی حکومت کے قدرتی اتحادی مولانا فضل الرحمن نے سراج الحق کے تعاون سے ایم ایم اے کی شکل میں ایک مضبوط انٹری کی کوشش کی ہے۔ خیبرپختونخوا اور بلوچستان کی سیاست میںان دو شخصیات کی اہمیت سے انکار نہیں۔ پاکستان کی موجودہ رنگ برنگی سیاست اب بلوچستان سے چیئرمین سینٹ کے انتخاب کے بعد نرالارخ اختیار کرتی نظر آتی ہے اورنئی سیاسی جماعت بلوچستان عوامی پارٹی کا رنگ جنوبی پنجاب صوبہ بناﺅ تحریک پر بھی چڑھ گیا ہے۔جنوبی پنجاب کے نام پر پنجاب کا ایک مضبوط سیاسی دھڑا مستقبل کی انتخابی سیاست میں ن لیگ کو آنکھیں دکھاتا نظر آتا ہے۔پنجاب کے چودھری برادران بھی بہاولنگر کے ”بابا جی“ سے دعا لے آئے ہیں، ممکن ہے یہ دعا کئی دلوںمیں گھر کر جائے اور فنکشنل لیگ جنوبی پنجاب صوبہ تحریک اور چودھری برادران ”آجا بے جا سیکل تے“ ہو جائیں اور ”کنے کنے جاناں بلو دے گھر“ گانا گائیں، دوسری طرف ہمارے غریب ، مسکین جاوید ہاشمی صاحب نے بھی پرانی گاڑی چھوڑ کر نئی لینڈ کروزر پر سیاسی سفر کا فیصلہ کیاہے۔ پنجاب کے شہباز اب اونچی پرواز کی خاطر ایک بار پھر سندھ کے مورچے پر ڈٹے ہیں اور انہوں نے ایم کیو ایم بہادر آباد کے سہارے نئے سیاسی سفر کا آغاز کیا ہے اور اے این پی کے سینیٹر شاہی سید کی انہیں حمایت حاصل ہے مگر انہوں نے ن لیگ کے سندھ میں ڈوبے سفینے کو کنارے لگانے کی خاطر اپنی جماعت کے دیرینہ ساتھیوںکا سہارا لینا گوارا نہیں کیا اور حالات کے رخ اپنی پروازشروع کر دی جو شائد بحیثیت ن لیگ کے صدر ان کا پہلا کمزور سیاسی فیصلہ تصور کیا جائے گا۔ بہتر تو یہ تھا کہ وہ (ن) لیگ کے تمام دیرینہ بزرگ ساتھیوں کو مناتے اور نوجوانوں کو پکارتے اور ان کے کندھوں پر سوار ہو کر کراچی کے گلی کوچوں میں جاتے چاہے ان کا قافلہ چھوٹا ہی کیوں نہ ہوتا۔ یقینا لیڈر کبھی ہجوم کا محتاج نہیں ہوتا۔ اسے کسی سہارے کی ضرورت نہیں پڑتی وہ ہمیشہ دلوں پر راج کرتا ہے اور یہی کارگر اوردیرپافارمولاہے۔میاں شہباز شریف کا طرز حکمرانی اختلافات، سوالات اور الزامات کے باوجود چاروں صوبوں میں قابل قبول نظر آتا ہے مگر شائد حالات ابھی ان کے ساتھ نہیں مگر ایسی بھی مایوسی نہیں کہ وہ مستقبل کے سیاسی ڈھانچے میں اپنا مضبوط سیاسی کردار ادا نہ کرسکیں۔ صرف صفیں سیدھی کرنے کی ضرورت ہے خصوصاًسندھ، خیبرپختونخوا،بلوچستان کے عوام براہ راست ان کے منتظر ہیں۔
سندھ خصوصاً کراچی، حیدر آباد میں ایم کیوایم کے دھڑوں میں کھینچا تانی جو رخ اختیار کرتی نظرآتی ہے کوئی ایک بھی دھڑا ان دونوں شہروں پر براہ راست سیاسی قبضہ جمانے کی پوزیشن میں نظرنہیں آتا مگر پی ایس پی کی شکل میں مصطفی کمال اپنا کمال دکھا سکتے ہیں اور اندرون سندھ فنکشنل لیگ، ذوالفقار مرزا اینڈ کمپنی، شیرازی برادران پیپلز پارٹی کی راہ میں رکاوٹ بنتے نظر آتے ہیں۔ آنے والے دنوں میں سندھ کی سیاست میں ”لوٹ سیل“ لگنے والی ہے۔ بڑی بڑی سیاسی شخصیات حیران کن طورپر نئے سیاسی ٹھکانوں پر بسیرا کرنے والی ہیں کہ اقتدار ہی ان کی ترجیح ہے۔ دیکھتے ہیں کس کے ہاتھ کیا لگتا ہے۔ (ن) لیگ کے بعد محسوس یہی ہوتا ہے کہ پیپلز پارٹی پر بھاری وقت آنے والا ہے۔ راز داں کہتے ہیں کہ ”چن“ چڑھنے کے بعد کوئی نیا ”چن“ ضرور چڑھے گا اوریہ چن پیپلز پارٹی پنجاب کو گجرات سے لاہور تک گرہن ضرور لگائے گا۔ پیپلز پارٹی پر گرہن کے بد اثرات نظر آتے ہیں۔ بلوچستان میں جو نظر آتا ہے وہ ہے نہیں جو ہے وہ نظر نہیںآتا۔ یہاں سیاست حبس زدہ، گھٹن اور دباﺅ کے ماحول میں ہے۔ اشاروں پر راتوں رات لوگوں کی کایا پلٹ جاتی ہے ۔ نواب ثناءاللہ زہری نے ن لیگ کو جو گھاﺅ لگایا ہے جنرل (ر) عبدالقادر بلوچ کی شکل میں ازالے کی اچھی کوشش ہے۔ دیکھتے ہیں جنرل صاحب اپنے مزاج سے ہٹ کر ن لیگ کو بلوچستان میں کس طرح اس کا کھویا مقام واپس دلا سکتے ہیں عوامی حلقوں میں بلوچستان نیشنل پارٹی کے قائدین عبدالمالک بلوچ، میر حاصل بزنجو نیک نام ہیں۔ ان کا اڑھائی سالہ دور حکومت معتبر حلقوں ناراض بلوچوں کے درمیان پل کا کردار قرار دیا جاسکتا ہے۔ مستقبل میں بلوچستان میں اقتدار کی سیاست ان کے گرد گھوم سکتی ہے۔ نئے ٹیلنٹ کو تجربہ کار مخلص لوگوں کے ساتھ بلوچستان کی معاشی وسیاسی تعمیر وترقی و خوش حالی کے نئے دور میں آزمایا جاسکتاہے۔
سیاست کے کھیتوں پر جو ”کلٹی ویٹر“ چلنے جارہا ہے وہ خیبرپختونخوا کی سنگلاخ چٹانوں کو بھی زرخیز مٹی میں بدلنے کی کوشش کرے گا۔ ہوسکتا ہے کہ کے پی کے میں اپنی کارکردگی کے گن گانے والے شکاری پنجاب کے پرندے پکڑتے پکڑتے خیبرپختونخوا میں اپنا کھیت اجاڑ بیٹھیں۔ کے پی کے کی آئندہ کی سیاست میں پیپلز پارٹی کے ساتھ اے این پی اور ایم ایم اے اہم کردار ادا کرتی دکھائی دے رہی ہیں۔ ن لیگ کا یہاں کوئی ”امیر“ ہے نہ ”مقام“سیاست کے حمام میں ہر کوئی خوشیاں سمیٹنے کا خواہاں ہے، غم بانٹنا کسی کی ترجیحات میں شامل نہیں۔ کیا خوب مذاق ہے کہ سرمایہ دار اشرافیہ کو اپنی مخالف اشرافیہ کا توڑ کرنے کے لئے ایک بار پھر غریبوں کے حقوق اچانک یاد آگئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں