33

پاکستان ایف اے ٹی ایف ایکشن پلان کی تکمیل کو یقینی بنارہا ہے، مشیر خزانہ

مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ پاکستان ایف اے ٹی ایف ایکشن پلان کی تکمیل کو یقینی بنارہا ہے۔

تفصیلات کے مطابق مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے پائیدار ترقی کے حوالے سے اقوام متحدہ کے پینل سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بین الاقوامی برادری کے ایک ذمہ دار رکن کی حیثیت سے پاکستان اینٹی منی لانڈرنگ کیلئے کوشاں ہے جبکہ ایف اے ٹی ایف کے 27 ایکشن پلان آئٹمز میں سے 14 پر کام کیا ہے۔

پاکستان نے باقی 13 ایکشن پلان آئٹمز سے نمٹنے میں خاطر خواہ پیشرفت کی ہے جبکہ پاکستان نے ترسیلات زر بھیجنے والے بیرون ملک مقیم کی آسانی کیلئے قانون سازی کی ہے۔

پاکستان نے باہمی تشخیصی رپورٹ کے مجوزہ اقدامات سے نمٹنے میں کافی پیشرفت کی ہے جس میں تکنیکی تعمیل کو پورا کرنے کے لئے 15 قانونی ترامیم عملدرآمد کیا ہے۔

اینٹی منی لانڈرنگ، دہشت گردوں کی مالی معاونت روکنے کیلئے اہم اقدامات کئے ہیں، حالیہ برسوں میں اینٹی منی لانڈرنگ اور ٹیررازم فنانسنگ روکنے کے قوانین کو سخت کیا ہے۔

بین الاقوامی معیار کے ساتھ قوانین کو مزید بہتر بنانے کیلئے اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ میں ترمیم کی گئی ہے جبکہ اے ایم ایل ایکٹ کے شیڈول میں پیش گوئی کے متعدد جرائم کو شامل کیا گیا ہے۔
کرپشن ، منشیات ، دہشت گردی اور انسانی سمگلنگ سمیت سنگین جرائم جبکہ فارن ایکسچینج ریگولیشن ایکٹ کی خلاف ورزیوں کو بھی اینٹی منی لانڈرنگ کے شیڈول میں شامل کیا گیا ہے۔

پاکستان ریمیٹنسز انیشیٹیو کے ذریعے ترسیلات بھیجنے والوں کو سہولیات دی گئی ہیں جس کی وجہ سے ترسیلات زر میں اضافہ ہوا ہے۔

اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ 2010 کے تحت ان جرائم میں بھی سزا دی جاسکتی ہے جبکہ 2008 میں ترسیلات زر 6.4 ارب ڈالر تھیں اور 2020 میں 23 ارب ڈالر تک پہنچ گئی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں