لاہور دھماکے کے سہولت کاروں کے گرد گھیرا تنگ، 3 مشکوک افراد کی نشاندہی

لاہور: لاہور دھماکے میں ملوث افراد کے کے گرد گھیرا تنگ کردیا گیا، پولیس نے تین افراد کی نشاندہی کرتے ہوئے شناخت کے لیے نادرا سے رابطہ کرلیا ساتھ ہی جیو فینسنگ بھی مکمل کرلی گئی۔ذرائع کے مطابق انارکلی دھماکے کی تفتیش میں پیش رفت سامنے آئی ہے، پولیس نے کلوز سرکٹ فوٹیجز سے تین مشتبہ افراد کی نشاندہی کرلی اور تمام ملزمان کے چہروں کی شناخت کے لیے نادرا سے رابطہ کیا ہے۔
پولیس کا کہنا ہے کہ مشتبہ افراد دھماکے سے قبل جائے وقوع کے ارد گرد دیکھے گئے، مشتبہ افراد کا ریکارڈ حاصل کرکے کردار کا تعین کیا جائے گا، تفتیش مکمل ہونے تک کسی کو حتمی ملزم قرار نہیں دے سکتے۔مشکوک فون کالز شارٹ لسٹ، شبہ ہے دہشتگرد کسی اور ضلع سے آئے.
پولیس کا یہ بھی کہنا ہے کہ دھماکے کی جیوفینسنگ مکمل کرلی گئی ہے، مشتبہ کالز شارٹ لسٹ کرنی شروع کردی گئی ہیں اور تفتیش کا دائرہ دوسرے اضلاع تک پھیلا دیا گیا ہے، شبہ ہے کہ سہولت کار اور ہینڈلر کسی اور ضلع سے لاہور آئے، اس ضمن میں مشتبہ افراد کا ریکارڈ اکٹھا کیا جارہا ہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ سہولت کاروں اور مبینہ دہشت گرد کے درمیان رابطہ رہا ہے، جائے وقوع سے حاصل مشتبہ افراد کو تصاویر کی مدد سے ٹریس کیا جارہا ہے تاہم تفتیش مکمل ہونے تک کسی کو حتمی ملزم قرار نہیں دے سکتے۔
دریں اثنا بم دھماکے میں زخمیوں کا علاج و معالجہ جاری ہے۔ ایم ایس میو اسپتال کے مطابق بم دھماکے کے زخمی 21 سالہ شیراز کی حالت تشویش ناک ہے، شیراز رکشا ڈرائیور ہے اور انارکلی سواری اتارنے آیا تھا، ہسپتال میں زیر علاج مزید 5 مریضوں کی حالت بھی تشویش ناک ہے جب کہ دیگر مریضوں کی حالت خطرے سے باہر ہے جنہیں بہترین طبی سہولیات دیں جارہی ہیں۔
واضح رہے کہ جمعرات کو لاہور نیو انارکلی بازار میں زوردار دھماکے کے نتیجے میں ایک بچے سمیت 3 افراد جاں بحق اور 29 زخمی ہوئے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں