وزیر اعلیٰ پنجاب کے حلف کیلئے اسپیکر قومی اسمبلی کو نامزد کرنے کا فیصلہ لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج

لاہور: تحریک انصاف نے وزیر اعلیٰ پنجاب کے حلف کیلئے اسپیکر قومی اسمبلی کو نامزد کرنے کا فیصلہ لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا ہے اور ایک اپیل دائر کی گئی ہے۔اپیل تحریک انصاف کے 17 ارکان اسمبلی نے اظہر صدیق ایڈووکیٹ کے توسط سے لاہور ہائیکورٹ سے رجوع کیا اور اپیل میں وفاقی اور صوبائی حکومت کو فریق بنایا گیا ہے۔اپیل میں یہ قانونی نکتہ اٹھایا گیا کہ عدالت کو پارلیمانی معاملات میں مداخلت کا اختیار نہیں ہے۔اپیل میں کہا گیا کہ ہائیکورٹ کا 29 اپریل کا حکم آئین کے مطابقت نہیں رکھتا اپیل میں یہ نشاندہی کی گئی کہ آئین کے تحت صدر اور گورنر کسی عدالت کو جوابدہ نہیں۔اپیل میں بتایا گیا کہ وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کے دوران مسلم لیگ ن نے پولیس کو داخل کرایا اور تحریک انصاف کے منحرف ارکان کی حوصلہ افرائی کی گئی ہے۔اپیل سنگل بینچ کے فیصلے میں صدر اور گورنر کے خلاف ریمارکس کا حوالہ دیا گیا اور کہا گیا کہ وزیر اعلیٰ کے انتخاب کیلئے درخواست پر 7 ججز پر مشتمل فل بینچ کو سماعت کرنی چاہیے تھی۔اپیل میں استدعا کی گئی کہ وزیر اعلیٰ کے حلف کیلئے اسپیکر قومی اسمبلی کو نامزد کرنے کے عدالتی فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے۔واضح رہے گزشتہ روز لاہورہائی کورٹ نے اسپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف کو وزیر اعلیٰ پنجاب کے عہدے کے لیے حمزہ شہباز سے آج ساڑھے گیارہ بجے حلف لینے کا حکم دیا تھا۔عدالت نے وفاقی حکومت کو حکم دیا کہ اسپیکر قومی اسمبلی سے حلف لینے کا بندوبست کرے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں