سینکڑوں انتہا پسند اسرائیلیوں کا مسجد اقصیٰ پر دھاوا، عبادت کرنیوالوں پر تشدد

سینکڑوں انتہا پسند اسرائیلی شہریوں نے مسجدِ اقصیٰ پر دھاوابول دیا اور عبادت کرنے والوں کو تشددکا نشانہ بنایا۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق انتہا پسندوں نے مسجد میں اسرائیلی جھنڈے لہرائے اور فلسطینیوں کے خلاف نعرے بازی بھی کی۔اسرائیلی شہریوں نے عبادت کے لیے آئے افراد کو تشدد کا نشانہ بھی بنایا جس کے خلاف فلسطینیوں نے احتجاج کیا۔تاہم مقبوضہ بیت المقدس میں یہودی مارچ کےموقع پراسرائیلی فورسزاورفلسطینیوں میں جھڑپ ہوئی، اسرائیلی فورسز کی جانب سے کارروائی کی گئی اور متعدد افراد گرفتار کیے گئے۔رپورٹ کے مطابق اسرائیلی فورسز اورفلسطینیون میں جھڑپ مسجد اقصیٰ کے قریب دمشق گیٹ پرہوئی۔فلسطینی ریڈکریسنٹ سوسائٹی نے اسرائیلی فورسزسے جھڑپوں میں 79 فلسطینیوں کے زخمی ہونے کی تصدیق کی۔اس کے علاوہ اسرائیلی فورسزکی جانب سے درجنوں افرادکوگرفتاربھی کیا گیاہے۔
واضح رہے کہ1967 کی جنگ کی یاد میں اسرائیل کی جانب سے ہرسال یہودی مارچ کا انعقادکیاجاتا ہے،گزشتہ سال یہودی مارچ میں کشیدگی کے باعث اسرائیل اورغزہ میں 11 روزہ جنگ ہوئی تھی، حماس گزشتہ ہفتےخبردارکیا تھا کہ یہودی مارچ مسجد اقصیٰ کےاحاطے سے نہ گزرے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں