خیبر پختونخوا؛ پہاڑوں پر آگ لگنے کے واقعات میں 3 خواتین سمیت 4 افراد جاں بحق

پشاور: خیبر پختنخوا کے مختلف پہلاڑی علاقوں میں لگنے کے واقعات کے باعث 3 خواتین سمیت 4 افراد جاں بحق ہوگئے۔ذرائع کے مطابق صوبہ خیر پختونخوا کے علاقوں سوات، بونیر، مینگورہ، شانگلہ اور چکیسر کے پہاڑوں پر آگ لگنے کے متعدد واقعات میں تین خواتین سمیت 4 افراد جھلس کے جاں بحق ہوگئے۔ریسیکیو اہلکاروں کا کہنا ہے کہ پہاڑوں پر آگ بھجانے کے عمل کو تیز کردیا ہے جبکہ امدادی کارروائیاں بھی کی جارہی ہیں۔پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ جنگلات میں لگنے والی آگ نے مقامی گھروں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔
حکام کا کہنا ہے کہ سوات کے پہاڑوں پر چار مختلف جگہوں پر آگ لگی ہوئی ہے جبکہ متعلقہ اداروں کی عدم دلچسپی کی وجہ سے واقعات میں روز بروز اضافہ ہورہا ہے۔
مقامی افراد کا کہنا ہے کہ آگ لگنے کے باعث ہزاروں کی تعداد میں قیمتی درخت جل کر خاکستر ہوگئے ہیں۔
دوسری جانب پہاڑی سلسلوں میں آگ لگنے کے واقعات میں اضافے پر عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما نے تشویش اظہار کرتےہوئے کہا کہ شانگلہ علی جان کپرئی اور بہلول خیل میں آگ خطرناک صورتحال اختیار کرچکا ہے، آگ لگنے سے چار افراد جاں بحق ہوچکے ہیں جبکہ حکومت کہیں نظر نہیں آرہی۔اے این پی رہنماء امل ولی خان نے کہا کہ پشاور، بلوچستان، بونیر، دیر، شانگلہ، سوات، تورغر کے قیمتی پہاڑ جل رہے ہیں اور حکومت سوئی ہوئی ہے، لوگ اپنی مدد آپ کے تحت آگ بھجانے میں مصروف ہیں۔انہوں نے کہا کہ واقعات کی شفاف تحقیقات کرائی جائیں اور ملوث افراد کو سامنے لایا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں