لوڈ شیڈنگ سے تنگ شہری مصالحے پیسنے اور فون چارج کرنے بجلی کے دفتر جاپہنچا

لوڈ شیڈنگ نے پاکستان سمیت پڑوسی ملک بھارت میں بھی شہریوں کا جینا دوبھر کردیا ہے۔
جہاں کچھ افراد ان مشکلات پر صبر سے کام لے رہے ہیں تو وہیں بھارتی ریاست کرناٹک سے تعلق رکھنے والے شہری ہنومان تھاپا لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے گھر کے مصالحے پیسنے اور موبائل فون چارج کرنے روز بجلی کے دفتر جا پہنچتے ہیں۔
حیرت انگیز طور پر ہنومان تھاپا گزشتہ 10 ماہ سے بجلی کے دفتر اپنے ادھورے کام کرنے جارہا ہے جس نے اب بھارتی میڈیا سمیت سوشل میڈیا کی توجہ اپنی جانب مرکوز کی ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق ہنومان تھاپا کے گھر دن میں محض 3 سے 4 گھنٹے بجلی آتی ہے جس کی شکایت وہ متعدد بار متعلقہ حکام کو کرچکا ہے لیکن اس کی درخواست کی سنوائی نہیں ہوتی۔تاہم اس نے انتہائی غیر معمولی قدم اٹھاتے ہوئے بجلی کے دفتر جانا شروع کردیا۔رپورٹس کے مطابق جب شہری اعلیٰ افسر کے پاس گیا اور اس نے اپنے مسائل کا بتایا کہ ہم گھروں میں کھانا پکانے کے لیے بیٹھے رہتے تھے، ہمارے فون سارا دن بند ہوتے تھے جس پر افسر نے جھنجھلاہٹ کے باعث کہا کہ ٹھیک ہے ایسا کرو اپنا گرائینڈر لاؤ اور دفتر کے کچن میں جاکر مصالحہ پیس لو۔
ہنومان تھاپا نے اس بات کو سنجیدہ لیا اور اب روز ہی بجلی کے دفتر مصالحے پیسنے اور موبائل چارج کرنے پہنچ جاتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں