3,413

پنجاب کی وزارت اعلیٰ کے عہدے پر تحریک انصاف میں شدید اختلافات،شاہ محمود قریشی ڈٹ گئے

لاہور:تحر یک انصاف کے وائس چیئر مین شاہ محمود قر یشی اورسینیٹرچوہدری محمدسرور نے پنجاب کی وزارت اعلیٰ کےلئے کسی بھی امیدوار کی حمایت نہ کر نے کا فیصلہ کر لیا ‘وائس چیئر مین شاہ محمود قریشی نے خود ضمنی انتخابات میں پنجاب اسمبلی کی نشست پر الیکشن لڑ کر وزیراعلی بننے کا فیصلہ کر لیا۔ذرائع کے مطابق تحریک انصاف کے وائس چیئرمین شاہ محمود قر یشی نے وفاق کی بجائے پنجاب میں ہی سیاست کر نے کا فیصلہ کر لیا ہے اور تحریک انصاف کے سینیٹر چوہدری محمدسرور بھی انکی بھرپور حمایت کر رہے ہیں اس لیے دونوں شخصیات پنجاب کی وزارت اعلی کےلئے کسی اور کی حمایت کی نہ کر نے کا فیصلہ کر لیا بلکہ وائس چیئرمین شاہ محمودقریشی نے خود ضمنی انتخابات میں پنجاب اسمبلی کی نشست پر الیکشن لڑ کر وزیر اعلی بننے کا فیصلہ کر لیاہے جسکے لیے وہ ملتان کے کسی حلقے سے اپنے پارٹی رکن سے استعفیٰ دلوا کر پنجاب اسمبلی کی نشست کےلئے الیکشن لڑ سکتے ہیں۔ دوسری طرف تحر یک انصاف نے پنجاب میں (ق)لیگ کو وزیر اعلی کا عہدہ دینے سے انکار کر دیا جبکہ (ق) لیگ نے (ن) لیگ سے بھی رابطہ کر لیا۔ذرائع کے مطابق ق لیگ کا انتخابات میں پی ٹی آئی کے ساتھ اتحاد تھا تاہم پی ٹی آئی ق لیگ کو کوئی بھی بڑا عہدہ دینے کیلئے تاحال تیار نہیں ہے اس لیے ق لیگ نے اپنی اہمیت کو بڑھانے کیلئے ن لیگ سے رابطہ بھی کر لیاہے جس کے باعث اگر ن لیگ ان کے ساتھ اتحاد کرتی ہے تو انہیں کوئی بڑا عہدہ قربان کرنا ہوگا۔ن لیگ کی جانب سے دعوی کیا گیاہے کہ 18 اراکین رابطے میں ہیں جبکہ پی ٹی آئی نے 16 اراکین کی حمایت کا دعوی کر دیاہے کسی بھی پارٹی کو پنجاب میں اپنی حکومت بنانے کیلئے 371 میں سے 186 نشستوں کی ضرورت ہو گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں