30

فیشن ویک میں ماڈلز کی کچرے سے بنے لباس پہن کر کیٹ واک

آپ سب نے دنیا بھر میں منعقد کیے جانے والے فیشن ویک کے بارے میں تو عام طور پر سُنا ہی ہوگا مگر کیا آپ نے کبھی ماڈل کو ریمپ پر کچرے سے بنے لباس میں کیٹ واک کرتے ہوئے دیکھا ہے؟ اگر نہیں دیکھا تو اب دیکھیے۔
نیویارک میں ہر سال مشہور فیشن ویک کا انعقاد کیا جاتا ہے جس میں بڑے سے بڑا ڈیزائنر حصہ لیتا ہے اور اس سال بھی نیویارک فیشن ویک2019 کا انعقاد کیا گیا۔جس میں پچھلے سال کی طرح اس سال بھی ’رپلی ٹریشی فیشن شو‘ کا منعقد کیا گیا۔’رپلی ٹریشی فیشن شو‘میں ڈیلاس، ٹیکساس اور دیگر شہروں سے ٹاپ ڈیزائنرز نے کچرے کا استعمال کرتے ہوئے جدید طرز کے نِت نئے ڈیزائن کے جوڑے بنا کر اپنے ٹیلنٹ کو دکھایا جس کو دیکھ کر لوگ حیران رہ گئے۔
ڈیزائنرز نے کچرے کو ’ری سائیکل‘ کرکے اسے پہننے کے قابل جوڑوں میں تبدیل کردیا۔اس ایونٹ میں کچرے سے بنے کپڑوں کو دیکھنے کے لیے دور دراز سے لوگ آئے تاکہ وہ اس انوکھے فیشن شو کا حصہ بن سکیں۔
’رپلی ٹریشی فیشن شو‘ میں جج نے ڈیزائنرز کے کپڑوں کو بنانے کا انداز، ماڈلز کے چلنے کا انداز اور کپڑوں کی تیاری میں کن کن چیزوں کا کس طرح استعمال کیا گیا ہے ان تمام چیزوں کو مدِنظر رکھتے ہوئے اپنا فیصلہ سُنایا۔
تمام ڈیزائنرز نے کپڑوں کی تیاری میں کچرے کی تمام تر چیزیں استعمال کیں جس میں پلاسٹک سے لے کر بوتلوں کے ڈھکن تک کا بھی استعمال کیا گیا تھا جو کے بہت ہی حیرت انگیز بات ہے۔ٹریشی فیشن شو 2019کی فاتح ڈیزائنر ’اُکیندرا اولیبو‘ ہیں جنہوں نے پچھلے سال ہونے والے ٹریشی فیشن شو میں بھی پہلی پوزیشن حاصل کی تھی اور خوش قسمتی سے اس بار بھی یہ پہلی پوزیشن لینے میں کامیاب ہوگیئں۔جیتنے والی ڈیزائنر نے ایک مرمیڈ گاؤن تیار کیا تھا جو کہ پلاسٹک کے شوپنگ بیگز سے تیار کیا گیا تھا اور اس لباس کو بنانے میں ڈیزائنر کو 100 سے زیادہ گھنٹے لگے تھے۔اس سے قبل ان ہی ڈیزائنر نے پچھلے سال ایک ایسا لباس تیار کیا تھا جو کہ سلور رنگ کے ڈائٹ پیپسی کے کین اور پلاسٹک سے تیار کیا گیا تھا جس نے لوگوں اور ججز کا دل جیت لیا تھا۔
جیتنے والے پہلے فاتح کو 1000 ڈالرز کی رقم دی گئی جبکہ دوسرے نمبر پر آنے والی ڈیزائنر کو 500 ڈالرز اور تیسرے نمبر پر آنے والی کو 250 ڈالرز انعامی رقم دی گئی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں