عام کمپیوٹر کو کوانٹم کمپیوٹر سے زیادہ تیز رفتار بنانے والا الگورتھم تیار

کوانٹم کمپیوٹرز کے بارے میں دعویٰ کیا جاتا ہے کہ وہ بہت تیزی سے ٹاسک مکمل کرتے ہیں اور عام کمپیوٹر ان کا مقابلہ نہیں کرسکتے۔درحقیقت گوگل نے تو 2019 میں دعویٰ کیا تھا کہ اس نے ایک ایسا جدید ترین کوانٹم کمپیوٹر تیار کیا ہے جو مشکل ترین اور پیچیدہ کام سپر کمپیوٹر کے مقابلے میں صرف 3 منٹ میں پورا کرسکتا ہے جبکہ سپر کمپیوٹر کو یہ کام کرنے میں 10 ہزار سال لگ سکتے ہیں۔
مگر اب ایک نئی تحقیق میں کوانٹم کمپیوٹرز کی اس بالادستی کو چیلنج کیا گیا ہے۔چین کے انسٹیٹوٹ آف Theoretical فزکس کی تحقیق میں ایک ایسا مؤثر الگورتھم تیار کیا گیا جو عام کمپیوٹر کو بھی کوانٹم کمپیوٹر کی طرح ٹاسک مکمل کرنے والا بنا دیتا ہے، بس وہ 3 منٹ کی بجائے یہ کام 15 گھنٹے میں مکمل کرتا ہے۔
تحقیق کے مطابق جس کمپیوٹر پر اس الگورتھم کو استعمال کیا گیا وہ کچھ زیادہ طاقتور نہیں تھا۔محققین نے کہا کہ اگر اس الگورتھم کو کسی جدید سپر کمپیوٹر میں استعمال کیا جائے تو ہمارا اندازہ ہے کہ ٹاسک مکمل کرنے کے لیے چند درجن سیکنڈ درکار ہوں گے اور وہ گوگل کے کوانٹم کمپیوٹر سے بھی زیادہ تیز ہوجائے گا۔یہاں یہ بات یاد رکھنی چاہیے کہ کوانٹم پراسیسرز ابھی تک مکمل کمپیوٹر نہیں اور ان کی ٹاسک مکمل کرنے کی صلاحیت محدود ہوتی ہے۔اس وقت ان کو تیار کرنے والے اداروں کا مقصد کسی مخصوص ٹاسک میں مشین کی بالادستی قائم کرنا ہوتا ہے۔اس تحقیق کے نتائج فزیکل ریویوز لیٹرز میں شائع ہوئے اور اس الگورتھم کو Sycamore پراسیسر کا نام دیا گیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں