مناسک حج کی ادائیگی جاری، آج رکن اعظم وقوف عرفہ ادا کیا جائے گا

مکہ مکرمہ: مناسک حج کی ادائیگی جاری ہے ،رواں برس کورونا کے باعث 60ہزار عازمین حج کی سعادت حاصل کر رہے ہیں ۔ آج حج کا رکن اعظم وقوف عرفہ ادا کیا جائے گا جبکہ امام کعبہ خطبہ حج دیں گے۔اے اللہ ہم حاضر ہیں، وادی مکہ لبیک اللھم لبیک کی صداؤں سے گونج اُٹھی۔ 60 ہزار عازمین حج کے قافلے منیٰ سے میدان عرفات پہنچے جہاں حج کا اہم رکن اعظم وقوف عرفہ ادا کریں گے۔ مسجد نمرہ میں خطبہ حج دیا جائے گا اور عازمین اپنا دن عبادت میں گزاریں گے۔ عازمین حج نماز مغرب کے بعد مزدلفہ جائیں گے اور نماز کے بعد کنکریاں اکٹھی کریں گے۔ مسجد الحرام میں غلاف کعبہ تبدیل کرنے کی روح پرور تقریب منعقد ہوئی،نئے غلاف کعبہ کو 670 کلوگرام خام ریشم سے بنے سیاہ کپڑے سے بنایا گیا ہے، غلاف پر 120 کلوگرام سنہری اور سو کلو گرام چاندی کے دھاگے سے آیات قرآنی اور مقدس کلمات منقش کیے گئے ہیں۔عازمین آج حج کا رکن اعظم وقوف عرفہ ادا کریں گے،امام کعبہ مسجد نمرہ میں خطبہ حج دیں گے۔ رواں برس ویکسین لگوانے والے 60ہزار افراد کوحج کی اجازت دی گئی ہے ۔جبکہ کورونا سے پہلے ہر برس تقریبا 30لاکھ مسلمان حج کی ادائیگی کے لئے مکہ مکرمہ پہنچتے تھے۔60 ہزارعازمین آج حج کا رکنِ اعظم وقوف عرفہ ادا کریں گےغیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق سعودی شہریوں اور وہیں پر مقیم غیرملکیوں سمیت 60 ہزار عازمین کے قافلے نماز فجر کے بعد منی سے میدان عرفات پہنچنا شروع ہوگئے ہیں، جہاں عازمین آج حج کا رکنِ اعظم وقوف عرفہ ادا کریں گے، اور سورج غروب ہونے تک عبادت کریں گے۔میدان عرفات میں حجاج کسی بھی جگہ قیام کرسکتے ہیں، تاہم کورونا وبا کے پیش نظر سعودی انتظامیہ نے حجاج کے لیے خصوصی خیمے نصب کرائے ہیں، جہاں سماجی فاصلے کی مکمل پاپندی کا اہتمام کیا گیا ہے، میدان عرفات میں مسجد نمرہ کو سینیٹائز کیا گیا ہے اور نئے قالین بچھائے گئے ہیں، اور نمازیوں کے درمیان سماجی فاصلے کے لیےعلامتیں بھی لگی ہوئی ہیں۔
ظہر کی اذان پر مسجد نمرہ سے حج کا خطبہ ہوگا، اس سال مسجد الحرام کے خطیب اور امام شیخ بندر بلیلہ خطبہ حج دیں گے اور نماز کی امامت کرائیں گے۔ نمازیں ادا کرنے کے بعد حجاج دعائیں کریں گے۔ آفتاب غروب ہونے تک دعاؤں کا سلسلہ جاری رہے گا، تاہم حجاج نماز مغر ب ادا کیے بغیر میدان عرفات سے مزدلفہ کے لیے روانہ ہوں گے، جہاں حجاج مغرب اورعشا کی نمازیں ایک اذان اور دو تکبیروں کے ساتھ ادا کریں گے اور رات مزدلفہ میں گزاریں گے۔منی اورعرفات کے درمیان واقع مزدلفہ میں بھی خصوصی انتظامات کیے گئے ہیں۔ مسجد المشعر الحرام میں نئے قالین بچھائے گئے ہیں، حجاج یہاں فجر تک قیام کرتے ہیں اور رمی جمرات (علامتی شیطانوں کو کنکریاں مارنا) کے لیے کنکریاں جمع کرتے ہیں اور صبح منی کے لیے روانہ ہو جاتے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں